آزاد کی رگ سخت ہے مانندِ رگِ سنگ

آزاد کی رگ سخت ہے مانند رگ سنگ
محکوم کی رگ نرم ہے مانند رگ تاک
محکوم کا دل مردہ و افسردہ و نومید
آزاد کا دل زندہ و پرسوز و طرب ناک
آزاد کی دولت دل روشن نفس گرم
محکوم کا سرمایہ فقط دیدہ نم ناک
محکوم ہے بیگانہ اخلاص و مروت
ہر چند کہ منطق کی دلیلوں میں ہے چالاک
ممکن نہیں محکوم ہو آزاد کا ہمدوش
وہ بندہ افلاک ہے یہ خواجہ افلاک