شمار سبحہ، "مرغوبِ بتِ مشکل" پسند آیا

شمار سبحہ، "مرغوبِ بتِ مشکل" پسند آیا
تماشائے بہ یک کف بُردنِ صد دل، پسند آیا

بہ فیضِ بے دلی، نومیدیِ جاوید آساں ہے
کشائش کو ہمارا عقدۂ مشکل پسند آیا

ہوائے [1] سیرِ گل، آئینۂ بے مہریِ قاتل
کہ اندازِ بخوں غلطیدنِ [2] بسمل پسند آیا

ہوئی جس کو بہارِ فرصتِ ہستی سے آگاہی
برنگِ لالہ، جامِ بادہ بر محمل پسند آیا

سوادِ چشمِ بسمل انتخابِ نقطہ آرائی
خرامِ نازِ بے پروائیِ قاتل پسند آیا

[3] روانی ہائے موجِ خونِ بسمل سے ٹپکتا ہے
کہ لطفِ بے تحاشا رفتنِ قاتل پسند آیا

اسدؔ ہر جا سخن نے طرحِ باغِ تازہ ڈالی ہے
مجھے رنگِ بہار ایجادیِ بیدلؔ پسند آیا

  1. نسخۂ حمیدیہ میں "حجابِ سیرِ گل" (جویریہ مسعود)
  2. اصل نسخۂ نظامی میں ’غلتیدن‘ ہے جو سہوِ کتابت ہے (اعجاز عبید)
  3. یہ شعر "نسخۂ حمیدیہ میں نہیں ہے۔ (جویریہ مسعود)